غالب 161

کوئی امید بر نہیں آتی 
کوئی صورت نظر نہیں آتی

موت کا ایک دن معین ہے
نیند کیوں رات بھر نہیں آتی

آگے آتی تھی حالِ دل پہ ہنسی
اب کسی بات پر نہیں آتی

جانتا ہوں ثوابِ طاعت و زہد
پر طبعیت ادھر نہیں آتی 

ہے کچھ ایسی ہی بات جو چپ ہوں
ورنہ کیا بات کر نہیں آتی

داغَ دل گر نظر نہیں آتا
بو بھی اے چارہ گر نہیں آتی

ہم وہاں ہیں جہاں سے ہم کو بھی 
کچھ ہماری خبر نہیں آتی

مرتے ہیں آرزو میں مرنے کی 
موت آتی ہے پر نہیں آتی 

کعبے کس منھ سے جاوگے غالب
شرم تم کو مگر نہیں آتی 



12345»